A Poet Who Brought Glamour And Grace To Urdu Poetry | Best Urdu Poetry

Urdu Poetry

Urdu Poetry



Malikzada Manzoor Ahmad: A poet who brought glamour and grace to Urdu poetry

Professor Malikzada Manzoor Ahmad (October 17, 1929-April 22, 2016) was a poet who brought both glamour and grace to Urdu poetry, attracting followers from diverse fields like Bollywood as well as politics. Even stars like Dilip Kumar were mesmerized by his oratory and compering skills. The thespian once said he was afraid of speaking after an orator like Malikzada Manzoor Ahmad had spoken.Urdu poetry
No wonder Malikzada Manzoor Ahmad compered the DCM mushaira from 1952 to 2016 for a period of 64 years. He also compered the Indo-Pak mushaira in Ambala for years as well as the Lal Qila mushaira for the longest period, said noted Urdu poet Sanjay Mishra ‘Shauq’.
“His fan following was not limited to Bollywood. He had fans in political circles too, like former prime minister late Inder Kumar Gujral, late prime minister Indira Gandhi, former presidents like Fakhruddin Ali Ahmad and Giani Zail Singh. His fan following was also in Pakistan, USA, Australia, Qatar, UAE, Saudi Arabia,” said ‘Shauq’.Urdu poetry
His son Parvez Malikzada who is also a brilliant compere and orator par excellence said, “ In Pakistani newspaper ‘The Dawn’ a scholar Amjad bin Amjad had written that there was no one like Malikzada Manzoor Ahmad in Pakistan who could conduct mushairas and literary meetings so smoothly with so much grace. Pakistanis must learn from him how to conduct literary sessions.”
He said his father achieved meteoric heights despite heavy odds. Small wonder his life and works were a topic of research by scholars. During his lifetime, three PhDs were awarded by Jammu University, Nagpur University and Gorakhpur University on his work, showing that he was appreciated in different corners of India. Recently an M Phil was awarded by a university on his work, he said.Urdu poetry
Awards galore
Professor Malikzada Manzoor Ahmad served as a lecturer in history in Maharajganj, lecturer in English in Azamgarh, lecturer in Urdu in Gorakhpur University and retired as a professor of Urdu from Lucknow University.
He penned more than a dozen books in prose and poetry.
He was president of Uttar Pradesh Urdu Academy, chairman of UP government’s Fakhruddin Ali Ahmad Memorial Committee, member executive council National Council for Promotion of Urdu, member Prasar Bharti, member, executive council Lucknow University, etc.Urdu poetry
He was bestowed with more than 80 national & international awards; his age and the awards received were almost equal in number.
First Published: Oct 17, 2019, 00:07 IST

:ایک ایسا شاعر جو اردو شاعری میں گلیمر اور فضل لائے

پروفیسر ملک زادہ منظور احمد (17 اکتوبر ، 1929۔ 22 اپریل ، 2016) ایک ایسے شاعر تھے جو بالی ووڈ کے علاوہ سیاست کے مختلف شعبوں سے تعلق رکھنے والے پیروکاروں کو راغب کرتے ہوئے اردو شاعری میں گلیمر اور فضل دونوں لاتے تھے۔ یہاں تک کہ دلیپ کمار جیسے ستارے بھی ان کی تقریری اور موازنہ کرنے کی مہارت سے مگن ہوگئے تھے۔ دی اسپیشین نے ایک بار کہا تھا کہ ملک زادہ منظور احمد جیسے بولے جانے کے بعد وہ بولنے سے ڈرتا ہے۔
Urdu poetry
تعجب کی بات نہیں کہ ملکزادہ منظور احمد نے 1952 سے 2016 تک 64 سال کی مدت کے لئے ڈی سی ایم مشاعرہ مرتب کیا۔ اردو کے نامور شاعر سنجے مشرا ‘شؤق’ نے کہا کہ انہوں نے طویل عرصے تک امبالا میں ہند پاک مشاعرہ کے ساتھ ساتھ لال قلعہ مشاعرہ بھی مرتب کیا۔
Urdu poetry
“ان کی فین فالونگ صرف بالی ووڈ تک محدود نہیں تھی۔ سابق وزیر اعظم مرحوم اندیر کمار گجرال ، مرحوم وزیر اعظم اندرا گاندھی ، فخر الدین علی احمد اور گیانی زیل سنگھ جیسے سابق صدور کی طرح ان کے بھی سیاسی حلقوں میں مداح تھے۔ ان کی فین فالونگ پاکستان ، امریکہ ، آسٹریلیا ، قطر ، متحدہ عرب امارات ، سعودی عرب میں بھی تھی۔
Urdu poetry
ان کے بیٹے پرویز ملکزادہ جو ایک بہت زبردست قابل اور ماہر وابستگی بھی ہیں ، نے کہا ، "پاکستانی نیوز پیپر 'ڈان' میں ایک عالم امجد بن امجد نے لکھا تھا کہ پاکستان میں ملک زادہ منظور احمد جیسا کوئی نہیں تھا جو مشاعرے اور ادبی ملاقاتیں کرسکتا تھا۔ اتنے آسانی سے اتنے فضل سے۔ پاکستانیوں کو ادبی سیشن کا انعقاد کرنے کا طریقہ ان سے سیکھنا چاہئے۔
Urdu poetry
انہوں نے کہا کہ ان کے والد نے شدید مشکلات کے باوجود meteoric اونچائی حاصل کی۔ چھوٹی حیرت ہے کہ اس کی زندگی اور کام اسکالرز کے ذریعہ تحقیق کا موضوع تھے۔ ان کی زندگی کے دوران ، جموں یونیورسٹی ، ناگپور یونیورسٹی اور گورکھپور یونیورسٹی نے ان کے کام پر تین پی ایچ ڈی سے نوازا ، اس سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ ہندوستان کے مختلف کونوں میں ان کی تعریف کی گئی۔ انہوں نے بتایا کہ حال ہی میں ایم فل کو ایک یونیورسٹی نے ان کے کام پر ایوارڈ دیا تھا۔
Urdu poetry
ایوارڈ ساکھ
Urdu poetry
پروفیسر ملک زادہ منظور احمد مہاراج گنج میں تاریخ کے لیکچرار ، اعظم گڑھ میں انگریزی میں لیکچرر ، گورکھپور یونیورسٹی میں اردو میں لیکچرر اور لکھنؤ یونیورسٹی سے اردو کے پروفیسر کے عہدے پر ریٹائر ہوئے۔

انہوں نے ایک درجن سے زیادہ کتابیں گدی اور نظم میں لکھیں۔
Urdu poetry
وہ اتر پردیش اردو اکیڈمی کے صدر ، یوپی حکومت کی فخر الدین علی احمد میموریل کمیٹی کے چیئرمین ، ممبر ایگزیکٹو کونسل برائے قومی اردو برائے فروغ اردو ، ممبر پروسار بھارتی ، ممبر ، ایگزیکٹو کونسل لکھنؤ یونیورسٹی وغیرہ تھے۔

انہیں 80 سے زیادہ قومی اور بین الاقوامی ایوارڈز سے نوازا گیا۔ اس کی عمر اور ملنے والے ایوارڈ تعداد میں قریب برابر تھے۔

پہلا اشاعت: اکتوبر 17 ، 2019 00:07 IST

Urdu poetry :

Urdu Poetry

Video Of Malik Zada Manzoor Ahmad:









Last Intro :

                                Best Sad Lines For WhatsApp Status 2019  Download Beautiful and inspiring sad, romantic, heart touching Urdu, Hindi Shayari on diary love quotes. Click on image to enlarge and right-click Now select save image as to download poetry images on your device. 

Conclusion :

                                 Thanks for visiting our website. We hope you will enjoy it. Some people may emotional after reading sad poetry.

0 Comments